کیا انسان میں سانپ جیسا زہریلا ہونے کی صلاحیت ہے؟ ہوشربا تحقیق –

اکثر ٹی وی ڈراموں اور فلموں میں انسان کو سانپ کا روپ دھارتے ہوئے دکھایا جاتا ہے، جس میں ایک عورت ناگن بن کر دوسروں کو ڈستی ہے اور ڈسے جانے والا موت کے منہ میں چلا جاتا ہے۔

اس بات کا حقیقت سے کتنا تعلق ہے؟ یا اس میں کہاں تک سچائی ہے؟ کہ انسان کے اندر بھی خطرناک حد تک زہریلا بننے کی صلاحیت موجود ہے۔

اس حوالے سے ایک ویب سائٹ نے جدید سائنس کے حوالے سے بتایا ہے کہ انسان کے اندر بھی مخصوص حالات میں زہریلا بننے کی صلاحیت موجود ہوتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق سانپ اور بچھو کے علاوہ بھی کئی جانور ایسے ہیں جنہوں نے ارتقا کے عمل سے گزر کر زہریلے پن کی خصوصیت حاصل کی ہے تاکہ دشمنوں سے اپنا دفاع کرسکیں اور دوسرے جانوروں کو شکار کر سکیں۔

حالیہ تحقیق سے ظاہر ہوا ہے کہ نہ صرف انسان بلکہ دوسرے ممالیہ جانوروں کے اسی قسم کے جینز موجود ہیں جو سانپ میں پائے جاتے ہیں۔

جاپان کی اوکیناوا یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے سائنس دان اور اس تحقیق کے شریک مصنف اگنیش باروا نے لائیو سائنس کو بتایا کہ ’بنیادی طور پر انسان کے اندر (زہر بنانے کے) تمام ضروری اجزا موجود ہیں۔

سائنس دانوں کے مطابق زہر انہی غدودوں میں پیدا ہوتا ہے جن کے اندر انسانوں میں منہ کا لعاب تیار ہوتا ہے۔ جو جانور لعاب تیار کر سکتے ہیں، ان کے اندر ممکنہ طور پر زہر تیار کرنے کی صلاحیت موجود ہے۔

سائنسی جریدے “پی این اے ایس” میں شائع ہونے والی تحقیق کے مطابق بعض ماحولیاتی تبدیلیوں کی صورت میں انسان اور دوسرے ممالیہ جانور زہریلا لعاب پیدا کر سکتے ہیں۔

سائنس دانوں نے 1980 کی دہائی میں تجربات کے دوران دریافت کیا تھا کہ بعض قسموں کے چوہوں کا لعاب جب انجکشن کے ذریعے دوسرے چوہوں کو لگایا جائے تو وہ زہریلا ثابت ہوتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق اگر ماحول بدل جائے اور وہ چوہے جن کے لعاب میں زہریلی پروٹینز موجود ہوں ان کی نسل زیادہ کامیابی سے پھلنے پھولنے لگے تو چند ہزار سالوں میں زہریلے چوہے وجود میں آ جائیں گے۔

تحقیق میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اگر اسی قسم کی صورتِ حال انسانوں کو درپیش ہو جائے تو وہ بھی مخصوص حالات میں زہریلے ہو سکتے ہیں تاہم اس کا امکان کم ہے۔

اس تحقیق کے دوران سائنس دانوں نے زہر کی بجائے تین ہزار کے قریب ان جینز پر توجہ مرکوز کی جو خود زہر نہیں بناتے بلکہ زہر بنانے والے جینز کی مدد کرتے ہیں۔

سب سے پہلے سائنسدانوں نے ’ہابو‘ نامی زہریلے سانپ کے ڈی این اے کا جائزہ لیا اور دیکھا کہ اس میں کون سے ایسے جین ہیں جو زہر بنانے والے جینز کی دیکھ بھال کرتے ہیں۔ اس کے بعد انہوں نے اس کا تقابل دوسرے جانوروں سے کیا۔

سائنس دانوں کو پتہ چلا کہ انسانوں کے منہ میں لعاب بنانے والے جینز سانپ کے جینز سے بہت ملتے جلتے تھے۔ البتہ انسانوں میں یہ جین لعاب کے اندر موجود پروٹینز تیار کرتے ہیں جو خوراک کو ہضم کرنے میں مدد دیتے ہیں۔

سائنس دانوں کے مطابق دونوں نظاموں کی مشینری ایک جیسی ہی ہے۔ مزید یہ کہ انسان کے لعاب کے غدود ایک پروٹین تیار کرتے ہیں جو زہریلے جانور بھی بناتے ہیں۔ اس پروٹین کا نام کیلی کرین ہے اور یہ خوراک میں موجود پروٹینز کو تحلیل کرنے میں مدد دیتی ہے۔

انڈیپنڈنٹ اردو کی رپورٹ کے مطابق آسٹریلیا کی یونیورسٹی آف کوین لینڈ کے بائیو کیمسٹ اور زہروں کے ماہر برائن فرائی نے کہا کہ ’یہ محض اتفاق نہیں ہے کہ کیلی کرین مختلف جانوروں میں پائے جانے والے زہروں کا حصہ ہے، کیوں کہ چاہے کسی بھی شکل میں ہو، یہ بہت فعال انزائم ہے اور یہ بہت سے کام سرانجام دے سکتی ہے۔‘

رپورٹ کے مطابق ارتقائی نظریے کے مطابق کروڑوں سال قبل ممالیہ جانوروں اور سانپوں کا جدِ امجد ایک ہی تھا، اس لیے ان کے منہ کے اندر لعاب بنانے کا نظام بھی ایک ہی تھا۔

بعد میں ارتقائی مراحل سے گزرتے ہوئے سانپوں اور دوسرے زہریلے جانوروں کا لعاب اسی مشینری کو استعمال کرتے ہوئے زہریلا ہوتا چلا گیا، جب انسان اور دوسرے ممالیہ جانوروں میں یہ صلاحیت پیدا نہیں ہوئی، البتہ اس کی بنیادی مشینری ان میں بھی وہی ہے۔

Comments

About Ary News

Avatar

Check Also

کورونا میں مبتلا پاکستانی اداکارہ وینٹی لیٹر پر منتقل

فوٹوفائل پاکستان کی سینئر اداکارہ بشریٰ انصاری کی بہن اور اداکارہ سنبل شاہد کو کورونا …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے