”کیا سپریم کورٹ کو سرکاری دفتر سمجھ رکھا ہے؟جوایسی رپورٹ جمع کرائی“ – Pakistan

کراچی :سپریم کورٹ میں رائل پارک ریزیڈنسی کے انہدام سےمتعلق کیس میں چیف جسٹس گلزار احمد نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ کمشنر کراچی کیا کر ہے ہیں؟ انہیں فارغ کردیں، کیسی رپورٹ دی ہے؟ کیا سپریم کورٹ کو سرکاری دفتر سمجھ رکھا ہے؟ جو ایسی رپورٹ جمع کرائی ،کیا ہم اس رپورٹ پرانحصار کریں گے۔

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں چیف جسٹس پاکستان جسٹس گلزار احمد کی سربراہی میں رائل پارک ریزیڈنسی کے انہدام سےمتعلق کیس کی سماعت ہوئی۔

دوران سماعت کمشنرکراچی کی رپورٹ پرچیف جسٹس گلزار احمد نے برہمی کا اظہار کیا۔

چیف جسٹس نے کمشنرکراچی کی سرزنش کرتےہوئے کہا کہ کیاہم صرف آپ کی رپورٹ پرانحصارکریں گے؟یہ کیا لکھ کردیا ہےڈپٹی کمشنرنے،کیاسپریم کورٹ کوسرکاری دفترسمجھ رکھاہے؟۔

جسٹس گلزار احمد نے ایڈووکیٹ جنرل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ کیاکررہےہیں یہ کمشنر،فارغ کریں انہیں،سپریم کورٹ میں ایسی رپورٹ پیش کی جاتی ہے؟۔

کمشنرکراچی نے بتایا کہ وائی ایم سی ای میں500درخت لگائے،واکنگ ٹریک بنایا، جس پر عدالت نے کہا کہ کمشنرنےکہاوہ کسی اورکی رپورٹ جمع کرارہےہیں،کمشنرکوذمہ داری لے کر جوابدہ ہونا چاہیئے۔

کمشنرکراچی نے کہا کہ رائل پارک کے انہدام کا کام جاری ہے۔

عدالت نے ہل پارک سےمتعلق نظرثانی درخواست مستردکرتے ہوئے کمشنرکراچی کوکارروائی جاری رکھنےکا حکم دےیا۔

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری نے رائل پارک کو بحال کرنے کا حکم دے دیا۔

کیا پورے کراچی کو مختیارکاروں پر بانٹ دیا ہے ؟سپریم کورٹ

کراچی :سپریم کورٹ نے تجاوزات سے متعلق کیس میں نے ریمارکس دیئے کہ کیا پورے کراچی کو مختیار کاروں پر بانٹ دیا ہے ؟ کراچی تو کیپیٹل رہا ہے کیا ہورہا ہے اس شہر کے ساتھ۔

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں چیف جسٹس پاکستان جسٹس گلزار احمد کی سربراہی تجاوزات سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔

چیف جسٹس نے کہا کہ دستاویزات جعلی ہیں،ایس بی سی اےکااپررول بھی جعلی ہے،جس پرڈی جی ایس بی سی اےنے کہا کہ مہلت دےدیں تو مزید تحقیقات کرلیں گے۔

چیف جسٹس گلزار احمد نے تشویش کااظہار کرتےہوئے کہا کہ کیا پورے کراچی کومختیارکاروں پر بانٹ دیاہے؟کراچی تو کیپیٹل رہاہےکراچی کےساتھ کیا ہورہاہے؟ کسی کوشہرکی پرواہ نہیں،کوئی فکرمند نہیں۔

چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ وقت آگیا ہے کہ آنکھیں کھولیں، ایس بی سی اے والے کس دنیا میں رہ رہےہیں؟فیروزآباد کامختیارکارکون ہے؟اس نےکتنےکاغذ نکالےہیں؟۔

جسٹس گلزار احمد نے کمشنر کراچی کی سرزنش کرتےہوئے کہا کہ آپ اس شہرکےبارے میں کیا جانتےہیں؟۔

چیف جسٹس پاکستان نے ایڈووکیٹ جنرل سے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ کو بلائیں وہ بتائیں گے فیروزآباد میں مختیار کار کیا کررہا ہے؟جس پر ایڈووکیٹ جنرل نے کہا کہ کل تک مہلت دے دیں ہم تفصیل پیش کردیں گے۔

چیف جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ ابھی تو کچھ دیر میں مختیار کار ڈی ایچ اے آنے والا ہے،فیروزآباد کا مختیارکار ہوسکتاہےتوڈی ایچ اےکابھی نکل آئےگا۔

About Aaj News

Avatar

Check Also

اسپیکر سے معافی نہیں مانگوں گا، شاہد خاقان عباسی – Ummat News

مسلم لیگ ن کے رہنما و سابق وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے کہا ہے کہ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے